The Battle for Pakistan

South Asia Edition

Order the South Asia Edition from Amazon.in or (in Pakistan) Liberty Books

Praise for The Battle for Pakistan

Vintage Imprint of Penguin Random House

‘An intriguing, comprehensive and compassionate analysis of the dysfunctional relationship between the United States and Pakistan by the premier expert on the Pakistani army. Shuja Nawaz exposes the misconceptions and contradictions on both sides of one of the most crucial bilateral relations in the world’
BRUCE RIEDEL, senior fellow and director of the Brookings Intelligence Project, and author of Deadly Embrace: Pakistan, America and the Future of the Global Jihad 

‘A superb, thoroughly researched account of the complex dynamics that have defined the internal and external realities of Pakistan over the past dozen years. The Battle for Pakistan is a compelling read that provides enormous insights on the forces at work within Pakistan as the country’s civilian and military leaders determine Pakistan’s way forward at a critical juncture in time’ 
GENERAL DAVID PETRAEUS, former commander of the US Central Command and Coalition Forces in Iraq and Afghanistan, and former director of the CIA 

‘With well-researched and meticulously collected information, in-depth analyses and scholarly insights, Shuja Nawaz has produced an impressive and invaluable study of the twists and turns of US-Pakistan relations. Only a person with his understanding of the political dynamics in the two countries could provide such an authoritative and cogent account of how the dissonant but important respective interests of the two countries brought about periods of consequential cooperation. And yet these interests failed to create a basis for a stable relationship which continues to have critical relevance to the complex circumstances of the region. This book will be essential reading on the subject and for examining the past six decades of developments in the region’
RIAZ MOHAMMED KHAN, former Foreign Secretary of Pakistan, and author of Afghanistan and Pakistan: Conflict, Extremism, and Resistance to Modernity 

‘Shuja Nawaz has followed up his earlier tour de force of the Pakistan Army—Crossed Swords: Pakistan, Its Army and the Wars Within—with a superbly researched study of US-Pakistan relationship in all its dimensions. The Battle for Pakistan is essential reading for anyone attempting to fathom the fundamentals of the relationship between the two countries now and in the future. Shuja’s view is truly panoramic and he has masterfully pieced together the many facets of a complex and evolving relationship. His insights and deep analyses are invaluable for understanding the forces of change that are shaping the relationship and Pakistan’s future’
GENERAL JEHANGIR KARAMAT, former Chief of Army Staff and Pakistan ambassador to the United States 

‘An engaging and insightful exploration of the realities and dynamics that have shaped present-day Pakistan and the US-Pakistan relationship. Nawaz captures the essence of Pakistan’s seventy-year difficult and rocky journey. A relevant and important book’
CHUCK HAGEL, former US Secretary of Defense and US senator 

 ‘Writing about Pakistan is often like travelling through the looking glass, given the vast difference in perception of the nation from the outside and the perception that those within have of the world outside. Just as he did with his last book, in The Battle for Pakistan, Shuja Nawaz deftly manages the journey between what he calls “both homelands”, US and Pakistan: balancing a critical look of Pakistan’s actions on terror and foreign policy in the past decade and a half, with an insider’s account of who said what to whom, unravelling events like the killing of Osama Bin Laden to civil-military tensions, and all that led up to the Imran Khan election. The suggestions Mr Nawaz proffers at the end of the book bear some careful study as well’
SUHASINI HAIDAR, diplomatic editor, The Hindu 

‘In The Battle for Pakistan Shuja Nawaz delivers a forensic and illuminating investigation of the troubled relationship between the United States and Pakistan. His work is informed by valuable original interviews and delivers new details and evidence—including about the hunt for Osama Bin Laden—that will be of great interest to scholars, analysts, and the general public in both countries’
STEVE COLL, Pulitzer Prize–winning author of Ghost Wars and most recently Directorate S: The CIA and America’s Secret Wars in Afghanistan and Pakistan 

‘Shuja Nawaz’s new book makes a critical contribution to our understanding of the turbulence of the last decade in US-Pakistan ties and Pakistan’s fight for its democracy and security. US-Pakistan relations have long suffered because of mutual mistrust, suspicion, and misunderstanding. Shuja’s unique access in Washington and Islamabad has allowed him to tell both sides of the story in recent US-Pakistan relations. In doing so, hopefully this book can contribute to improved relations between our two countries in the coming decade and beyond’
GENERAL JAMES JONES, former Supreme Allied Commander in Europe, and National Security Advisor to President Barack Obama 

‘Shuja Nawaz has written with deep knowledge and arresting eloquence about what he calls the “misalliance” between two nations that often misunderstand each other, but must ultimately reach an understanding as two vital partners in a necessary alliance. And he writes as a citizen and insider of both countries, with matchless personal knowledge of the personalities who have both made history and will make the future. There is no better or more compelling volume to read about this often troubled, but imperative relationship between two nations on other sides of the world that have been brought into the same orbit by geopolitics, and an increasing diaspora of human talent’
SCOTT SIMON, Peabody Award–winning host of National Public Radio’s Weekend Edition Saturday 

 ‘His unique access to centres of power in Washington, Islamabad and Rawalpindi enable Shuja Nawaz to offer rare and fascinating insights into the roller-coaster US-Pakistan relationship. As the Afghanistan-Pakistan drama heads for denouement, The Battle for Pakistan promises to be an invaluable guidebook for politicians, diplomats and soldiers attempting to navigate this South Asian quagmire’
ADMIRAL ARUN PRAKASH, former chief of the Indian Navy and chairman, Chiefs of Staff 

Urdu review of The Battle for Pakistan by Zaman Khan

شجاع نواز کی کتاب The Battle for Pakistan ایک نظر پر

زمان خاں

شجاع نوا٘ز کسی تعارف کے محتاج نہیں ہیں۔ انہوں نے اپنی لیاقت کا لوہا پاکستان کی فوج کے بارے میں اپنی پہلی کتاب Crossed Swords , Pakistan , Its Army , and the Wars Within لکھ کراپنا لوہا منوا لیا تھا
زیر نظر ان کی نئئ کتاب ان کے بقول پہلی کتاب کا ہی تسلسل ہے-
شجاع نواز پاکستان کی فوج کے سابق سربراہ جنرل آصف نوا٘ز جنجوعہ کے چھوٹے بھائی ہیں- اس لئے ان کی رسائئ  انتظامیہ اور فوج کے ان کونوں کھدروں تک ہے جہاں  دوسرے دانشوروں اور تجزیہ نگاروں کے جاتے ہوئے پر جلتے ہیں-دوسری طرف  امریکہ میں ایک نہایت اہم ادارے میں کام کرنے کی وجہ سے ان کی رسائئ واشنگٹن میں حساس اداروں اور فیصلہ سازون تک بھی ہے-اس لئَے  ان کے پاس معلومات کا ذخیرہ دوسرے لوگوں سے بہت زیادہ ہے –ان کے ہر لکھے ہوئے لفظ کو ساری دنیا میں پالیسی ساز بہت اہمیت دیتے ہیں اور ان کی تحریروں کی قدر کرتے ہیں-ان کی بیٹی آمنہ نے بھی اپنی محنت سے امریکی میڈیا میں اپنا مقام بنا لیا ہے-
مجھے اس بات پر فخر ہے کہ وہ میرے فیس بک فرینڈ ہیں اور میں ان کی تحریروں کو بہت شوق اور اشتیاق سے پڑھتا ہوں کیونکہ ان تحریروں کو پڑھنے سے مجھے دنیا ، پاکستان اور امریکہ کی پالیسیوں کو سمجھنے میں مدد ملتی ہے-
 ان کی حال ہی میں چھپنے والی کتاب The Battle For Pakistan The Bitter US Friendship and a Tough Neighbourhood۔ہے جس میں انہوں نے پاکستان اور امریکہ کے تعلقات کا تفصیل کے ساتھ جائزہ لیا ہے-اس سے پہلے کہ میں اس کتاب پر بات کروں میں اپنے استاد جناب پروفیسر انوار ایچ سید کے ایک مضمون  اور ان کے اپنے ساتھ اننڑویو کا حوالہ دینا چاہوں گا-Who Pays the Piper Calls the Tune,  میں نے ان سے اختلاف کرتے ہوئے عرض کیا کہ پاکستان نے کئئ موقعوں پر امریکہ کی بات ماننے سے انکار کردیا جن میں ایک ایٹم بم بنانا بھی ہے-پروفیسر انوار ایچ سید  کہ   یونیورسٹی میں پولیٹیکل سائِنس کے میرے استاد بھی تھے نے کورا جواب دیا اور کہا کہ زمان صاحب اگر آپ کا باورچی یا ڈرایئور چاہے تو آپ کی زندگی اجیرن بنا سکتا ہے-
  شجاع نواز کی کتاب The Battle For Pakistan: The Bitter US Friendship and Tough Neighbourhoodکے تیرا باب ہیں-
1.The Revenge of Democracy? 2.Friends or Frenenemies? 3.2011 A Most Horrible Year! 4. From Tora Bora to Pathan Gali. 5. Internal Battles 6. Salala Anatomy of a failed alliance. 7. The Mismanagement the Civil-Military Relationship. 8. US Aid Leverage or Trap. 9. Mil to Mil Relations: Do More. 10. Standing in the Right Corner. 11. Transforming the Pakistan Army. 12. Pakistan’s Military Dilemma 13. Choices. 
کتاب کے شروع میں Important Milestones 2007-19   
جنہیں آپ اہم واقعات بھی کہہ سکتے ہیں کی تاریخیں دی ہیں-کتاب کے ابتدایہ Preface-Salvaging a Misalliance میں وہ لکھتے ہیں کہ امریکہ اور پاکستان کے تعلقات کوایک بیڈ شادی بھی کہا جاتا ہے-اس کے علاوہ چین اور جاپانی محاورے میں ایک ایسی جوڑی بھی کہا جا سکتا ہے جو سوتی تو ایک بستر پر ہے مگر خواب الگ الگ دیکھتی ہے-یہ شادی ٹوٹنے جارہی ہے مگر اسے دونوں پارٹیوں اور خطے کے مفادات کے لئیے بچانا ضروری ہے-کیونکہ پاکستان ایک ایسے علاقہ میں ہے جہاں یہ اہم کردار ادا کر سکتا ہے-
پچھلے ستر سالوں میں پاک-امریکہ تعلقات میں بہت اونچ نیچ دیکھنے میں آئی ہے-محبت کی پینگیں بھی  چڑحھائی گئی اور تو تکار کی نوبت بھی آئی-پاکستان میں ابھی جمہوریت پوری طرح نہیں آئی اور سویلین اور فوج کی کشمکش جاری ہے گو کہ ایک پیج کا نعرہ بھی لگایا جاتاہے-
شجاع نواز کا کہنا ہے کہ اسے اس بات پر فخر ہے کہ اس کی کئ نسلوں نے فوج میں خدمات  انجام دیں – وہ وردی کی عزت کرتے ہیں –ان کا تعلق جنگکو قبیلہ  راجپوت جنجوعہ سے ہے-مگر وہ سویلین حکومت کے متبادل کے طور پر فوج کی حمائیت نہیں کرتے-
اس کتاب میں انہوں نے پاکستان اور امریکہ کے تعلقات کے اچھے اور خراب پہلوں کا تفصیلی جائئزہ لیا ہے-ایک وقت آیا کہ امریکنوں نے افغانستان نے سرحد  میں داخل ہوکر پاکستانی فوجیوں کو مار دیا جس کے جواب میں پاکستانی فوج نے بھی کاروائئ کی-
امریکہ نے جواباً پاکستان کی مالی امداد روک دی-جو کہ اس نے افغانستان میں فوجی کاروائئ میں مدد کرنے پر جنرل مشرف کے زمانے میں وعدہ کی تھی-
ان کا کہنا ہے کہ امریکہ ہندوستان کے ساتھ دوستی کے بارے میں پاکستان کے جزبات اور تحفظات کو خاطر خوا اہمیت نہیں دیتا-
شجاع نے سوات میں مذہبی انتہا پسندی کے فروغ اور ملڑی ایکشن کا جائئزہ بھی لیا ہے-انہوں نے میمو گیٹ، امریکی فوجیوں کے اسامہ بن لادن کے لئئے ایبٹ آباد مشن پر بھی روشنی ڈالی ہے-
ان کا کہنا ہے کہ راحیل شریف کے آئئ ایس آئئ کے سربراہ نے بھی حکومت کا تختہ الٹنے کے کوشش کی تھی-
ان کا کہنا ہے کہ آئئ ایس آئئ کے ایک افسر بلی نے جو آجکل امریکہ میں رہتا ہے امریکہ کو اسامہ بن لادن کے بارے میں معلومات دیں-پاکستان کے وزیر اعظم نے واشنگٹن میں اعلان کیا کہ پاکستان نے اسامہ کے معاملہ میں امریکہ کی مدد کی تھی-
ڈرون حملوں کا بھی عجیب پس منظر تھا ایک طرف پاکستان حکومت کی اجازت سے یہ ہوتے تھے دوسری طرف حکومت پاکستان اس کی مذمت کرتی تھی-ان حملوں سے پاکستان میں امریکہ غیر مقبول ہو گیا-
  بمبئ دہشت گردی کے واقعہ کے بارے میں شجاع نے پاکستان کے سفیر حسین حقانی کے حوالے سے لکھا ہے کہ آئئ آیس آئئ کے چیف نے حقانی کو بتایا کہ یہ ہمارے آدمی تھے مگر مشن ہمارا نہیں تھا-
گو وہ ذاتی طور پر چاہتے ہیں کہ پاکستان اور امریکہ کے تعلقات مزید پھلے پھولیں مگر وہ امریک  کردار کے زبردست ناقد بھی ہیں –انہون نے اس سلسلہ میں ایک بہت ہی اہم امریکی دانشور Andrew Wilder کے جائزہ کو تفصیل سے پیش کیا ہے-
ان کا خیال ہے کہ پاکستان صرف عکسریت کے بل بوتے پر خوش حال ملک نہیں بن سکتا-اس کے لئئے اسے اپنے شہریوں کی تعلیم و تربیت اور ہنر مندی اور سماجی بھلائئ پر بہت زیادہ توجہ دینے کی ضرورت ہے-
ان کی یہ حقیقت پر مبنی رائے ہے کہ پاکستان اور ہندوستان کے درمیان ایٹمی جنگ کے نتیجہ میں دونوں ملک تباہ ہو جا یئں گے-
یہ کام پاکستان کے سارے ہمسایوں کے ساتھ پرامن تعلقات اور تجارت بڑھانے سے ہے ممکن ہے-
شجاع نے تین سابق آئئ ایس آئئ کے سربراہان کے ساتھ اپنی بات چیت کا حوالہ دیا ہے جن کے خیال میں دیشت گرد ویزہ لے کر نہیں آتے-اس لئے ویزہ میں آسانی ہونی چاہئے-
ان کے جائزہ کے مطابق پاکستانی فوج میں آج بھی مذہبی کا عناصر کا اچھا خاصہ اثر و رسوخ ہے-دو آئئ ایس آئئ کے سربراہ اور چند کور کمانڈر تبلیغی جماعت کے ممبر ہیں-
میرے خیال میں شجاع کی کتاب سیاست اور عالمی معاملات پر ایک بہت ہی اہم اضافہ ہے-خاص کر پاکستان اور امریکہ کے تعلقات کے بارے میں اس کتاب میں جتنی معلومات ملتی ہیں وہ اور کہیں نہیں ہیں-سو یہ سیاست، تاریخ اور انڑنیشل افیرز کے ہر طالب علم کو یہ پڑھنی چاہئئے

شجاع کی کتاب دنیا اور پاکستان میں چھپ گئئ اور اس پر  تبصرے بھی ہھی ہو گئے مگر یہ بات سمجھ نہیں آئئ کہ جب شجاع اپنی کتاب کی لانچ کے لئے پاکستان آئے تو فوجی حکام نے انہیں کہا کہ وہ کتاب لانچ نہ کریں مگر جب شجاع نے ان کی بات ماننے سے انکار کردیا تو انہوں نے منتظمین کے ذریعہ یہ فنکشن منسوخ کروا دئئے-